ڈینگی وائرس سے بچائو کیسے ممکن؟؟؟

ڈینگی ایک عالمی مسئلہ ہے اس وقت یہ بیماری دنیا کے ترقی یافتہ اور ترقی پذیر 132ممالک میں پائی جاتی ہے ۔جن میں سنگا پور ،ملائیشیا،اور تھائی لینڈ،پاکستان، انڈیا ،سری لنکا،سر فہرست ہیں ۔یہ ایک ایسا مرض ہے جسے آج تک کوئی بھی ملک ختم نہیں کر پایا اور نہ ہی اس کا خاتمہ کیا جا سکتا ہے ۔تاہم اسے کم ضرور کیا جا سکتا ہے ۔ جس کے لئے حکومت پنجاب بہت اچھے اقدامات کر رہی ہے وزیر اعلیٰ میاں شہباز شریف کی قیادت میں ڈینگی سے پاک پاکستان مہم پورے ملک میں چل رہی جس سے بہت اچھے نتائج مل رہے ہیں ۔ ڈینگی مکاؤ پروگرام میں محکمہ سوشل ویلفیئر اور این جی اوز بھی اپنا بھر پور کردار ادا کررہی ہیں ۔اس وقت پنجاب میں 2100کے قریب کیس رجسٹرڈ ہو چکے ہیں

اس بیماری کا ویکٹر مچھر ہے جس کی تین اقسام ہیں ایڈیز،ایجیپٹائی اور ایلبوپکٹس ہیں ۔پاکستان میں ایڈیز اور ایلبوپکٹس مچھر کی فیملی اس وائر س کو پھیلاتی ہے ۔ یہ وائرس اس کے انڈوں میں چلا جاتا ہے پھر ان سے بننے والے مچھروں میں منتقل ہو جاتا ہے اس طرح ہزاروں کی تعداد میں پیدا ہونے والے نئے مچھر ڈینگی پھیلانے کا سبب بنتے ہیں ۔ڈینگی وائرس کنٹرول کرنے کے لئے سب سے اہم بات یہ ہے کہ اس کے ویکٹر کو ختم کیا جائے ۔

اس بیماری کو ختم کرنے کے لئے صفائی بہت ضروری ہے ۔اس کے لئے یہ ہر گز ضروری نہیں ہے کہ سپرے یا فوگنگ کی جائے بلکہ ہمیں اپنے رویوں میں تبدیلی لانی ہو گی ۔پاکستان ایک اسلامی ملک ہے اوردین اسلام میں صفائی کو نصف ایمان کا درجہ حاصل ہے ۔ لہذا اگر ہم اس نصف ایمان کو صحیح معنوں میں اپنی زندگیوں میں لے آئیں اور اپنے گھر ،دفتر،گلی ،محلے،سکول ،کالج ،ہسپتال وغیرہ کو اتنا ہی صاف رکھیں جتنا دین میں بتایا گیا ہے۔اگر اس طرح احتیاط کریں گے تو ایسی بیماریوں سے بچا جا سکتا ہے ۔

/ Health Tips

No Comment yet.

Leave your question here

Your email address will not be published. Required fields are marked *